Strict Standards: call_user_func_array() expects parameter 1 to be a valid callback, non-static method Anderson_Makiyama_Captcha_On_Login::check_blocked_ips_befor_all() should not be called statically in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/class-wp-hook.php on line 286

Notice: register_sidebar was called incorrectly. No id was set in the arguments array for the "Sidebar" sidebar. Defaulting to "sidebar-1". Manually set the id to "sidebar-1" to silence this notice and keep existing sidebar content. Please see Debugging in WordPress for more information. (This message was added in version 4.2.0.) in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 4147

Notice: add_custom_background is deprecated since version 3.4.0! Use add_theme_support( 'custom-background', $args ) instead. in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 3839

Notice: add_custom_image_header is deprecated since version 3.4.0! Use add_theme_support( 'custom-header', $args ) instead. in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 3839

Notice: get_current_theme is deprecated since version 3.4.0! Use wp_get_theme() instead. in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 3839

Notice: get_theme is deprecated since version 3.4.0! Use wp_get_theme( $stylesheet ) instead. in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 3839

Notice: get_themes is deprecated since version 3.4.0! Use wp_get_themes() instead. in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 3839

Notice: wp_register_style was called incorrectly. Scripts and styles should not be registered or enqueued until the wp_enqueue_scripts, admin_enqueue_scripts, or login_enqueue_scripts hooks. Please see Debugging in WordPress for more information. (This message was added in version 3.3.0.) in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 4147

Notice: wp_enqueue_style was called incorrectly. Scripts and styles should not be registered or enqueued until the wp_enqueue_scripts, admin_enqueue_scripts, or login_enqueue_scripts hooks. Please see Debugging in WordPress for more information. (This message was added in version 3.3.0.) in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 4147

Notice: wp_register_style was called incorrectly. Scripts and styles should not be registered or enqueued until the wp_enqueue_scripts, admin_enqueue_scripts, or login_enqueue_scripts hooks. Please see Debugging in WordPress for more information. (This message was added in version 3.3.0.) in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 4147

Notice: wp_enqueue_style was called incorrectly. Scripts and styles should not be registered or enqueued until the wp_enqueue_scripts, admin_enqueue_scripts, or login_enqueue_scripts hooks. Please see Debugging in WordPress for more information. (This message was added in version 3.3.0.) in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-includes/functions.php on line 4147

Notice: Undefined index: aiosp_cpostactive in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-content/plugins/all-in-one-seo-pack/aioseop_class.php on line 1393
November, 2010 | Ecenterpk.com
Notice: Undefined index: aiosp_cpostactive in /home/ecenterp/public_html/blog/wp-content/plugins/all-in-one-seo-pack/aioseop_class.php on line 1393

Ecenterpk.com Education Center Pakistan

11Nov/104

PM announces package for teachers

ISLAMABAD: In a bid to appease protesting teachers and introduce a uniform education system in the Islamabad Capital Territory institutions, Prime Minister Yousuf Raza Gilani on Monday announced a package fulfulling some of the longstanding demands of the educators.

The prime minister announced upgradation of teachers and transformation of all federal government schools and colleges into Islamabad Model institutes “to end disparity and provide equal opportunities” to all students of Islamabad Capital Territory (ICT).

Gilani was speaking at the launching ceremony of a programme titled “Uniformity of Education Systems” for the teachers of schools and colleges of ICT.

Some of the key demands of the teachers which had been forwarded to the federal ministry included uniformity in “syllabus and distribution of financial resources, faculty designation, recruitment and promotion, administrative and academic structure of all public sector institutions and formation of a committee with representation of Federal Government, Model and Garrison schools and colleges.”

Federal Minister for Education Sardar Aseff Ahmad Ali, Education Secretary Muhammad Athar Tahir, DG Federal Directorate of Education (FDE) Shaheen Khan, teachers and other officials of the ministry were also present on the occasion.

The prime minister said all educational institutions of ICT would be named and administered as Islamabad Model Schools/ Colleges. He directed the Ministry of Education to consider the establishment of a Federation Public School in Islamabad as well as a Model University to cater to the affiliation needs of ICT Graduate and Postgraduate Colleges, which are presently affiliated with the University of Punjab.

Fulfilling the demands of the teachers, the prime minister announced the upgradation of posts of teachers working under FDE and the introduction of Time-Scale Promotion Formula which would replace the previously Four-Tier Promotion Formula.

According to the new formula, teachers of BPS-9 would be promoted to BPS-14, BPS-14 to BPS-16, BPS-16 to BPS-17, BPS-17 to BPS-20 and BPS-21.

Under the new upgradation formula, Matric-trained teachers would be given 14 scale instead of the existing 9 scale, and undergraduate teachers would be awarded 16 scale in place of the current 14 scale. Under the new scales, all the teachers and principals of the schools would be given opportunity for promotion up to BPS-21.

The prime minister also agreed to fulfil the demand of enhancing the charge allowance to the heads/principals of institutions of ICT. The details in this context would be finalised with the Ministry of Finance.

Gilani directed the education ministry to arrange transport facilities for students and teachers especially in the rural areas in collaboration with CDA and ICT. President Federal Government Schools Teachers Association Azher Mehmood welcomed the prime minister’s announcement. He urged that notification of the announcement be issued shortly. “The dreams of teachers would be fulfilled if the notification is issued and implemented in letter and spirit,” he said.

Another member of teachers association, M A Shahid, said that the prime minister took a pro-poor approach by announcing a uniform educational system in the federal capital. He said that this system would provide a level-playing field for all students. He also urged the early implementation of the package.

The prime minister said under the 18th Amendment, the curriculum system has been transferred to the provinces and the decision would not be taken back. He said if there is any controversy between provinces and the federation, it would be resolved in the Council of Common Interest (CCI) and in the Inter-Provincial Coordination Committee.

The PM said religious seminaries that are imparting education to 2.5 million children would also be brought into the mainstream while introducing new subjects. Negotiations in this regard are going on with Interior Ministry and Wafaq-ul-Madaris, which would be presented to the cabinet within a month.

Published in The Express Tribune, November 9th, 2010.

8Nov/100

ڈگری پنوعاقل کا نام تبدیل کر کے سیکریٹری تعلیم کے بھائی کے نام پر رکھ دیا گیا

کراچی (اسٹاف رپورٹر) صوبائی محکمہ تعلیم نے گورنمنٹ بوائز ڈگری کالج پنوعاقل ضلع سکھر کا نام تبدیل کر کے کے سیکریٹری تعلم علم الدین بلو کے بھائی شہید عبدالعزیز بلو کے نام پر رکھ دیا ہے جس کی منظوری وزیر تعلیم سندھ پیر مظہر الحق نے دے دی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ اس سلسلے میں باقاعدہ سمری سینئر صوبائی وزیر تعلیم پیر مظہر الحق کو بھیجی گئی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ سابق ڈی آئی جی پولیس شہید عبدالعزیز بلو کوٹ بلو تعلقہ پنوعاقل ڈسٹرکٹ سکھر کے ایک ایماندار اور بہادر افسر تھے۔ 2003ء میں وہ بلوچستان کے علاقے سبی میں ڈاکوؤں کے ساتھ مقابلے میں شہید ہوگئے۔ انہیں حکومت پاکستان کی جانب سے متعدد اعزازات اور انعامات سے نوازا گیا لہٰذا ان کی خدمات کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے گورنمنٹ بوائز ڈگری کالج پنوعاقل کا نام بدل کر شہید عبدالعزیز بلو گورنمنٹ کالج پنوعاقل ڈسٹرکٹ سکھر رکھ دیا جائے۔

6Nov/100

اساتذہ کو مراعات کی عدم ادائیگی، سیکریٹری تعلیم و دیگر عدالت میں طلب

حیدرآباد (بیورو رپورٹ)سندھ ہائی کورٹ حیدرآباد سرکٹ بینچ میں آل سندھ مسجد اسکول ٹیچرز ایسوسی ایشن کے مرکزی صدر امان اللہ تیغانی و دیگر عہدیداروں محمود خانزادہ‘ حضور بخش برڑو اور حافظ فتح محمد کی جانب سے دائر درخواست میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ صوبہ پنجاب و دیگر صوبوں میں 2007 ء سے اساتذہ کو ٹائم اسکیل و دیگر مراعات دی جارہی ہیں جو کہ ابھی تک سندھ کے اساتذہ کو نہیں ملی ہیں‘ محکمہ تعلیم سندھ نے اپریل 2010 ء میں ٹائم اسکیل دینے کے لیے نوٹیفکیشن جاری کیا تھا لیکن اس پر ابھی تک عملدرآمد نہیں ہوسکا ہے۔ اساتذہ نے کہا کہ سیکریٹری تعلیم نے 29 اکتوبر 2008 ء کو جاری کردہ ایک اور نوٹیفکیشن میں کہا تھا کہ محکمہ تعلیم کی 25 فیصد ملازمتیں سن کوٹہ کے تحت پر کی جائیں گی اس حکم نامے پر بھی عمل نہیں کیا جاسکا ہے‘ اس کا نوٹس لیا جائے ۔ سندھ ہائی کورٹ حیدرآباد سرکٹ بینچ کے جج جسٹس امیر ہانی مسلم نے ال سندھ مسجد اسکول اساتذہ کی درخواست پر سیکریٹری تعلیم سندھ علم الدین بلو‘ اکاؤنٹینٹ جنرل سندھ اور ایڈووکیٹ جنرل سندھ سے 15 نومبر کو جواب طلب کرلیا ہے۔

6Nov/100

Call to integrate tech with education

LAHORE:INCORPORATION of technology in higher education can raise the standards of learning and teaching at university level in Pakistan.
This was stated by resource persons and participants in a two-week workshop “Incorporating Technology in Education” during inaugural session held at Lahore College for Women University (LCWU) on Thursday. Dr Sonia Gull, coordinator of workshop, said that varsity aimed to make university faculty members aware about usage of technology in their skills of imparting education. Humaira Kausar, resource person of the workshop, was of the view that 20 people were participating in this course. “These participants are from various departments of LCWU and the course can make them aware about the advanced technological teaching aids”, she said adding the course was based on different modules that include basic IT equipments and operating system skills, professional documentation, lecture preparation, data manipulation and analysis, etc.The news

6Nov/100

صوبائی محکمہ تعلیم، نجی اسکولوں کی جانب سے فیسوں میں اضافہ روکنے میں ناکام

کراچی (اسٹاف رپورٹر) صوبائی محکمہ تعلیم نجی اسکولوں کی جانب سے کئے گئے فیسوں میں اضافے کو روکنے میں مکمل طور پر ناکام ہو گیا ہے۔ سندھ اسمبلی میں چند روز قبل نجی اسکولوں کی جانب سے فیسوں میں اضافے کے خلاف قرارداد منظور ہونے کے باوجود صوبائی محکمہ تعلیم نے اس حوالے سے کوئی اقدام نہیں کیا۔ سندھ میں سیلاب کے باوجود شہر کے بڑے نجی اسکول اپنی ٹیوشن فیسوں میں 11 سے 60 فیصد اضافہ کر چکے ہیں اور محکمہ تعلیم کسی ایک اسکول کو فیس میں اضافے سے نہیں روک سکا۔ ڈائریکٹوریٹ پرائیویٹ کا پورا عملہ نجی اسکولوں کے خلاف موثر کارروائی کے بجائے نجی اسکولوں کو رجسٹریشن دینے، ان کی تجدید کرنے، بیورو کریسی اور حکومتوں اور ان کے احباب کے بچوں کے داخلے کرانے پر لگا ہے۔ قواعد کے مطابق کوئی اسکول بھی بغیر حکومت کی منظوری کے 5فیصد فیس نہیں بڑھا سکتا مگر صورتحال اس کے برعکس ہے، رولز میں یہ بات لازمی شامل ہو کہ ہر اسکول اپنی انرولمنٹ کا 10فیصد مستحق طلبہ کو فری شپ دے گا مگر 98 فیصد نجی اسکول اس پر عمل نہیں کرتے اور خود ڈائریکٹر پرائیویٹ اسکولز کی جانب سے بھیجے گئے فری شپ کے خطوط کو ردی کی ٹوکری کی نذر کردیتے ہیں۔ اس طرح قواعد میں یہ بات بھی شامل ہے کہ نجی اسکول 3ماہ کی ٹیوشن فیس سے زیادہ داخلہ فیس نہیں لے سکتا لیکن 80 فیصد نجی اسکول 3ماہ کی ٹیوشن فیس سے کئی گنا داخلہ فیس وصول کر رہے ہیں، قواعد میں یہ بات بھی شامل ہے کہ ٹیوشن اور داخلہ فیس کے علاوہ کوئی اور فیس وصول نہیں کی جائے گی لیکن نجی اسکول کمپیوٹر فیس، سیکورٹی اور اینول چارجز کے ساتھ لائبریری فیس بھی وصول کر رہے ہیں مگر ڈائریکٹوریٹ پرائیویٹ اسکولز اور صوبائی محکمہ تعلیم صرف نوٹس جاری کرنے تک محدود ہے۔ دلچسپ امر یہ ہے کہ صوبائی اسمبلی نے گزشتہ حکومت میں نجی اسکولوں کے خلاف بڑھتی ہوئی شکایات کے خلاف باقاعدہ بل پاس کیا تھا اور نجی اسکولوں میں پڑھانے والے استاد کی کم سے کم تنخواہ سرکاری پرائمری اسکول ٹیچر کے برابر مقرر کی تھی مگر محکمہ تعلیم اس پر بھی عمل کرانے میں ناکام ہے اور دلچسپ امر یہ ہے کہ بیشتر نجی اسکول بے روزگاری کا فائدہ اٹھاتے ہوئے تعلیم یافتہ اساتذہ کو انتہائی کم تنخواہ دیتے ہیں اور محکمہ تعلیم یہ چیزیں جانتے ہوئے بھی کوئی کارروائی نہیں کرتا۔
3Nov/100

Damages Of School in Flood

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سیکرٹری تعلیم سندھ علم الدین بلو نے کہا ہے کہ سندھ میں سیلاب سے 6 لاکھ 24 ہزار طلبہ کی تعلیم متاثر ہوئی ہے، 8 ہزار 5 سو اسکول جزوی اور 3 ہزار مکمل تباہ ہوچکے ہیں۔ ان اسکولوں کی مرمت اور ازسرنو تعمیر پر 20 ارب روپے خرچ ہونگے۔ وہ اتوار تو پیک پرائیویٹ اسکولز منیجمنٹ ایسوسی ایشن کے تحت پوزیشن ہولڈر طلبہ کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے ۔ تقریب سے اسپیشل سیکریٹری تعلیم وسیم عرسانی، اعلیٰ ثانوی تعلیمی بورڈ کے چیئرمین پروفیسر انوار احمد زئی، میٹرک بورڈ کے چیئرمین انظار حسین زیدی، ڈائریکٹر پرائیویٹ اسکولز منسوب حسین صدیقی، ڈپٹی ڈائریکٹر پرائیویٹ اسکولز رفیعہ ملاح اور پیک پرائیویٹ اسکولز منیجمنٹ کے صدر حیدر علی نے بھی خطاب کیا۔ اس موقع پر پوزیشن ہولڈر طلبہ کو شیلڈز دینے کے علاوہ مثالی کارکردگی پر سرکاری اسکول دہلی ایکسٹینشن اسکول عزیز آباد کی ہیڈ مسٹریس شاہین فرحت،اسسٹنٹ ڈائریکٹر محمد اخلاق، ہیپی پیلس اسکول کے آصف خان اور میٹروپولس اسکول کو خصوصی شیلڈز پیش کی گئیں۔ سیکرٹری تعلیم نے اپنے خطاب میں کہا کہ نجی اسکول نے سیلاب متاثرین کی دل کھول کر مدد کی خصوصاً کراچی کی نجی اسکولوں کی ایسوسی ایشنز نے اس حوالے سے بہت کام کیا۔ سیکرٹری تعلیم نے کہا کہ کراچی، سکھر اور خیرپور میں اسکولوں میں قائم کئے گئے متاثرین کے کیمپ خالی ہوگئے ہیں جبکہ دادو، جامشورو اور حیدرآباد کے اسکول 3 روز کے اندر خالی ہو جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ متاثرین جن اسکولوں اور کالجوں میں ٹھہرے ہوئے تھے وہاں کا فرنیچر خراب ہوا ہے، بیت الخلاء ٹوٹ گئے ہیں جن کی مرمت کا کام شروع کر دیا گیا ہے۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ثانوی تعلیمی بورڈ کے چیئرمین انظار زیدی نے کہا کہ گورنر سندھ کی خصوصی دلچسپی کی وجہ سے میٹرک بورڈ کی کارکردگی بہتر ہوگئی ہے۔ نقل کا خاتمہ کر دیا گیا ہے۔ اعلیٰ ثانوی تعلیمی بورڈ کراچی کے چیئرمن پروفیسر انوار احمد زئی نے پوزیشن ہولڈر طلبہ کے اعزاز میں پروگرام منعقد کرنے پر پیک منیجمنٹ ایسوسی ایشن کو مبارکباد پیش کی اور پیک کی ویب سائٹ کا افتتاح کیا۔

3Nov/100

Promotion OF lecturers

کراچی (اسٹاف رپورٹر) صوبائی محکمہ تعلیم کی ڈپارٹمنٹل پروموشن کمیٹی (ڈی پی سی) نے سندھ کی تاریخ میں پہلی بار 723 کالج اساتذہ کو گریڈ 17 سے گریڈ 18 میں ترقی دیدی ہے جبکہ 42 سبجیکٹ اسپیشلسٹس کو بھی گریڈ 18 میں ترقی دے دی گئی ہے جن میں 33 مرد اور 9 خواتین اساتذہ شامل ہیں۔ ڈی پی سی کی صدارت سیکرٹری تعلیم سندھ علم الدین بلو نے کی۔ اجلاس میں اسپیشل سیکرٹری تعلیم وسیم عرسانی، ایڈیشنل سیکرٹری تعلیم کالجز اختر غوری، ایڈیشنل سیکرٹری سروسز سید محمد طیب، ڈائریکٹر جنرل کالجز ڈاکٹر ناصر انصار، ریجنل ڈائریکٹر کالجز نجمہ نیاز اور دیگر نے شرکت کی۔ اجلاس میں 800 کالج لیکچرار کی گریڈ 17 سے گریڈ 18 میں ترقی پر غور کیا گیا اور 723 کالج لیکچرار کو ترقی دینے کی منظوری دی گئی جن میں 287 خواتین اساتذہ اور 436 مرد اساتذہ شامل ہیں۔ آئندہ 10 روز میں اجلاس کے منٹس جاری کر کے ان اساتذہ کی ترقی کا باقاعدہ نوٹیفکیشن جاری کر دیا جائے گا۔ اجلاس میں کئی کالج اساتذہ کی اے سی آر نہ ہونے پر ڈی جی کالجز اور ریجنل ڈائریکٹر کالجز پر نکتہ چینی کی گئی اور ریجنل ڈائریکٹر کالجز سے کہا گیا کہ وہ منگل 2 نومبر تک ترقی نہ پانے والے اساتذہ کی اے سی آر پہنچا دیں تا کہ باقی رہ جانے والے اساتذہ کو بھی ترقی دی جائے۔ یاد رہے کہ گزشتہ ہفتے گریڈ 18 کے 220 مرد اسسٹنٹ پروفیسر اور 150 خواتین اسسٹنٹ پروفیسرز کو ایسوسی ایٹ پروفیسرز گریڈ 19 میں ترقی دینے کی منظوری دی گئی ہے۔